Notice: Undefined index: geoplugin_countryName in /customers/5/8/f/urduqasid.se/httpd.www/wp-content/plugins/stylo-core/stylo-core.php on line 96
116

” تعلیم یافتہ “

” قاسم تم کل اسکول کیوں نہیں آئے؟ بہت زبردست میچ ہوا اور ہم جیت بھی گئے.“ افتخار قاسم کو دیکھ کر بولا.
قاسم ” اچھا “ کہہ کر خاموش ہوگیا.
” کیا بات ہے سب خیریت تو ہے؟ اتنا اداس کیوں لگ رہا ہے بھائی؟ “ جمال نے قاسم کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے پوچھا.
” کچھ نہیں یار! بس کل طبیعت ٹھیک نہیں تھی اور دل بھی نہیں چاہ رہا تھا باہر جانے کا. “ قاسم آہستہ سے منمنا کے بولا.
” طبیعت خراب تھی یا پھر اپنے ابا کے ہتھے چڑھ گیا تھا پٹنے کے لئے؟“ پاس ہی کھڑے منور نے جملہ کسا. جس پر سارے لڑکے ہنسنے لگے.
” قاسم! تمہارے ابا واقعی تم کو مارتے ہیں؟ کیا وہ پڑھے لکھے نہیں ہیں؟ میرا مطلب ہے کوئی تعلیم یافتہ شخص ایسی حرکت نہیں کرتا نا. “ نور نے حیرت سے قاسم سے پوچھا.
قاسم نے نظریں اٹھا کر نور کو دیکھا اور پھر استہزائی انداز میں ہنس کر بولا. ” چھوڑو یار! کیسی بات کررہے ہو. تعلیم سے اس کا کیا لینا دینا. اگر ایسا ہوتا تو سر مراد اور سر جمالی کے بارے میں کیا خیال ہے.روزانہ، کوئی نہ کوئی طالبعلم ان کے ہاتھوں بری طرح پٹ رہا ہوتا ہے . وہ دونوں ہی تعلیم یافتہ ہیں. “

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں