وفاقی محتسب سیکرٹریٹ24 جنو ری1983ء کو ایک صدارتی فرمان کے تحت وجود میں آیا۔ 08اگست1983ء کو پہلے وفاقی محتسب نے حلف اٹھا یا۔ مو جو دہ وفاقی محتسب اعجا ز احمد قر یشی، جو حال ہی میں اس اس عہد ے پر تعینات ہو ئے ہیں، اس ادارے کے با رہو یں محتسب ہیں جو کہ گز شتہ دس سال سے اسی سیکر ٹر یٹ سے وابستہ تھے اور انتظا می و عدا لتی امور کا وسیع تجر بہ رکھتے ہیں۔ یو م تا سیس کے مو قع پر انہوں نے خصو صی پیغا م میں اپنے تمام ایڈ وائز روں اور انو سٹی گیشن افسروں پر زور دیا ہے کہ وہ شکا یت کنند گان کو زیا دہ سے زیا دہ ریلیف دینے اور میر ٹ اور شفا فیت کی بنیا د پر دفتر ی امو ر کو نمٹا نے کے لئے اپنی کو ششیں دوگنا کر دیں تا کہ عوام الناس کی داد رسی میں اضا فہ ہو سکے۔انہوں نے اپنے پیش رو محتسب صا حبان کی ادارے کے لئے خد مات کی تحسین کر تے ہو ئے کہا کہ انہوں نے بڑ ی محنت اور لگن سے ادارے کو اعلیٰ مقا م تک پہنچا نے کے لئے سر کا ری اداروں کی بدانتظامی کے خلا ف بڑ ے پیما نے پر عوام النا س کی خد مت کی اور ان اداروں کی بہتر ی کے لئے مطا لعا تی رپو رٹیں تیا ر کیں جن میں جیلوں کی اصلا ح، قید یوں با لخصو ص بچوں اور خوا تین کی سہو لیا ت کے ساتھ ساتھ پنشنروں اور بیرون ملک پا کستا نیوں کے مسائل حل کر نے میں مدد ملی۔بچوں کے خلا ف سا ئبر کرا ئمز کی روک تھام کے لئے اقدا مات اٹھا ئے گئے اور علا قا ئی دفا تر قا ئم کئے گئے۔ وفاقی محتسب اعجا ز احمد قر یشی نے یو م تا سیس کے مو قع پر اپنے پیغا م میں زور دے کر کہا کہ وفاقی محتسب کی رٹ قا ئم کرنے کے لئے اجتماعی مسا ئل کے سلسلے میں از خود کا رروائی کر نے کے علا وہ نئے اقدا مات بھی اٹھا ئے جا ئیں گے، عنقر یب سوات میں نیا دفتر کھو لا جا ئے گا نیز ایما ندار، محنتی اور لگن سے کام کر نے والے افسران کی بھر پور حو صلہ افزا ئی کی جا ئے گی۔ 24جنوری 2022ء کو وفا قی محتسب سیکر ٹر یٹ کو قا ئم ہو ئے پو رے39بر س ہو چکے ہیں۔ ان 39 بر سوں میں عوامی خد مات کے سلسلے میں اس ادارے کی کا ر گزا ری اور ارتقا ء کا جا ئزہ لیا جا ئے تو یہ با ت نہا یت خو ش آئند دکھا ئی دیتی ہے کہ سا ل بہ سال اس ادارے پر لوگوں کا اعتماد بڑ ھتا چلا جا رہا ہے۔ 1983 ء میں اپنے قیا م کے وقت کل 7812 شکا یات کا اندراج ہوا تھا جبکہ سال 2021 ء میں ایک لا کھ دس ہزار سے زائد شکا یات نمٹا ئی گئیں جن میں سے تقر یباً 42 ہزار شکا یات آن لا ئن مو صول ہو ئیں جس سے بخو بی اندازہ کیا جا سکتا ہے اور رفتار کا ر میں خا طر خواہ اضا فہ کے لئے جد ید ٹیکنا لو جی کے استعمال کو بھی برو ئے کار لا یا جا رہا ہے۔اگر گز شتہ چار بر سوں کا جا ئزہ لیا جا ئے تو یہ بات بھی با عث اطمینان ہے کہ اس دوران ساڑ ھے تین لا کھ سے زائد شکا یت کنند گان کو اس ادارے سے ریلیف مہیا کیا گیا جو پچھلے بر سوں کے مقا بلے میں کئی گنا زیا دہ ہے۔
محتسب اور احتساب کا تصوّر سب سے پہلے حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دور میں شروع ہوا، انہوں نے سرکاری عمال کے خلاف براہ راست شکایات کیلئے سب سے پہلا محتسب مقرر کیا۔ دور جدید میں سب سے پہلے سویڈن میں محتسب (Ombudsman) کا ادارہ قائم کیا گیا۔پاکستان میں اس وقت ٹیکس محتسب، بینکنگ محتسب، انشورنس محتسب، کام کی جگہ خواتین کو ہراساں کرنے کے خلاف محتسب اور صوبوں کے اندر الگ الگ محتسب کے ادارے کام کررہے ہیں ………… پا کستان کے محتسبین کی ایک تنظیم فو رم آف پا کستان امبڈ سمین F.P.O کے نام سے کام کر رہی ہے، جس میں بھی وفاقی محتسب کا مر کز ی کر دار ہے۔ ایشیاء میں ”ایشین امبڈسمین ایسویسی ایشن (AOA) کے نام سے ایک تنظیم کام کررہی ہے جس کے ارکان کی تعداد44ہے۔ 1996؁ء میں اے او اے کے قیام میں پاکستان نے بنیا دی کردار ادا کیا تھا، تب سے 2010تک اے اواے کے صدر(President)کا منصب پاکستان کے پاس رہا۔ اب بھی پاکستان کے وفاقی محتسب اے او اے کے صدر ہیں۔ (A.O.A) کا مرکزی سیکرٹریٹ بھی وفاقی محتسب پاکستان کے دفتر میں ہی واقع ہے۔ او آئی سی کے محتسبین کی تنظیم او آئی سی امبڈ سمین ایسو سی ایشن میں بھی وفاقی محتسب کا نما یاں کردار ہے، پا کستان کے ٹیکس محتسب اس تنظیم کے سیکر ٹر ی جنرل جب کہ ترکی کے محتسب صدر ہیں۔ اسی طر ح انٹرنیشنل امبڈسمین انسٹی ٹیوٹ(I.O.I)کے نام سے ایک بین الاقوامی تنظیم بھی قائم ہے جس کے ارکان کی تعداد 190 ہے۔ پا کستان اس کا بھی سر گرم ممبر ہے…… ان تفصیلات سے اندازہ لگا یا جا سکتا ہے کہ دنیا میں محتسب کے کتنے ادارے کام کررہے ہیں اور ان کی کتنی اہمیت ہے۔
وفاقی محتسب کا مرکزی دفتر اسلام آباد میں ہے جبکہ عوام الناس کی سہولت کیلئے ملک بھر میں تیر ہ علاقائی دفاتر لا ہور، کرا چی، پشا ور، کو ئٹہ، ملتان، فیصل آباد، حیدرآباد، سکھر،ایبٹ آباد، گو جر انوالہ، بہا ولپور، سر گو دھااور ڈیرہ اسما عیل خا ن میں بھی کام کر رہے ہیں۔ سوات میں بھی عنقر یب علا قا ئی دفتر قا ئم ہو جا ئے گا۔ اس ادارے کے قیام کابنیادی مقصد وفاقی حکومت کے تحت چلنے والے سرکاری اداروں کے خلاف عوام الناس کی شکایات کا ازالہ کرنا ہے۔خاص طور پر معاشرے کے وہ پسے ہوئے لوگ جن کی کہیں شنوائی نہیں ہوتی اور نہ ہی وہ عدالتوں اور وکلاء کے بھاری اخراجات برداشت کرسکتے ہیں، اس ادارے کے ذریعے اپنے مسا ئل حل کر وا سکتے ہیں۔اسے غریبوں کی عدالت بھی کہا جا سکتا ہے ………… وفاقی محتسب میں شکایت داخل کرنے کا طریق کار بڑاآسان ہے۔ کو ئی بھی شہر ی بذ ریعہ خط، ای میل، مو با ئل ایپ یا وفاقی محتسب کی ہیلپ لا ئن 1055 پر رابطہ کر کے یا خود دفتر آکر شکایت درج کرا سکتاہے۔ وفاقی محتسب سیکرٹریٹ میں سکائپ،IMOاور انسٹاگرام پر بھی شکایات کی سماعت کی جا تی ہے۔ شکایت کنندگان گھر بیٹھے سماعت میں شامل ہو سکتے ہیں، انہیں سفرکی صعوبت اٹھانے کی بھی ضرورت نہیں۔وفاقی محتسب سیکرٹریٹ میں شکا یت مو صول ہو تے ہی اسی روز بغیر کسی تاخیر کے اس پر کارروائی شروع ہوجاتی ہے اور اگلے روز شکایت گزار کو ایس ایم ایس کے ذریعے اسکی شکایت کا نمبر او رتاریخ سماعت کی اطلاع کر دی جاتی ہے اور ہر شکا یت کا زیا دہ سے زیا دہ ساٹھ دنوں میں فیصلہ ہو جا تا ہے۔
وفاقی محتسب نے عوام الناس کو ان کے گھر کی دہلیز پر انصاف فراہم کرنے کیلئے او سی آر (Outreach Complaint Resolution)کے نام سے ایک پائلٹ پراجیکٹ بھی شروع کر رکھا ہے جس کے تحت وفاقی محتسب کے افسران تحصیل اور ضلعی ہیڈ کوارٹرز میں جا کر عام شہریوں کو ان کے گھر کی دہلیز پر انصاف فراہم کر تے ہیں۔ ایسی شکایات کا فیصلہ45 دن میں کیا جاتا ہے۔یہ ایک ایسا انقلابی قدم ہے جسے پوری دنیا میں سراہا گیا۔2021 ء میں اس پرا جیکٹ کے تحت 8161 شکا یات کا ازالہ کیا گیا۔ اس کے ساتھ ساتھ وفاقی محتسب نے شکایات کے فوری ازالہ کیلئے تمام وفاقی اداروں کو ہدایت کر رکھی ہے کہ وہ ادارہ جاتی سطح پر شکایات کو حل کرنے کا نظام و ضع کریں چنانچہ بیشتروفاقی اداروں نے اپنے ہاں شکایات سیل قائم کر رکھے ہیں جہاں کو ئی بھی شخص شکا یت کر سکتا ہے۔ اگر ادارہ کی سطح پر شکایات 30دن میں حل نہ ہوں تو وہ ایک خود کار نظام کے تحت وفاقی محتسب کے کمپیوٹر ائزڈ سسٹم پر آجاتی ہیں اور وفاقی محتسب میں ان پر کارروائی شروع ہو جاتی ہے، اس مقصد کیلئے وفاقی حکومت کے178 اداروں کو وفاقی محتسب کے کمپیوٹرائزڈ نظام سے منسلک کیا گیا ہے۔
وفا قی محتسب نے اپنے آپ کو صرف شکایات کے فیصلوں تک محدود نہیں رکھا بلکہ مختلف اداروں کے نظام کی اصلاح کیلئے متعلقہ شعبوں کی نامور شخصیات کی سربراہی میں مختلف کمیٹیاں تشکیل دیں‘جن کی سفارشات کو سپریم کورٹ تک نے نہ صرف سراہا بلکہ سپریم کورٹ نے وفاقی محتسب سے کہا کہ وہ پاکستان میں تھانوں اور جیلوں کی اصلا ح کے با رے میں صوبوں کے ساتھ مشاورت کے بعد تجاویز دیں۔ اب تک وفاقی محتسب جیلوں میں اصلا ح کے حوالے سے دس سہ ما ہی رپو رٹیں سپر یم کورٹ میں جمع کرا چکے ہیں، جن کے مطا بق مخیر حضرات کے ساتھ مل کر قیدیوں کیلئے جیلوں کے اندر سہولیات فراہم کرنے کا بندوبست کیا گیا۔تقریباً اڑھائی تین سوکے لگ بھگ قیدیوں کا جرمانہ ادا کر کے ان کو رہائی دلوائی گئی، مفت وکیل فرا ہم کئے گئے، مختلف یونیورسٹیوں اورتعلیمی اداروں کے تعاون سے قیدیوں کیلئے مفت تعلیم اور ہنر سکھا نے کابندوبست کیا گیا۔ملک بھر کی جیلوں میں قید خواتین اور بچوں کوعید کے موقع پر نئے کپڑ ے، کھانے پینے کی اشیاء اور بچوں کو تحا ئف دئیے گئے۔
وفاقی محتسب نے پنشنرز کے مسا ئل کے حل کیلئے بھی متعدد اقدا مات اٹھا ئے، پنشنروں کو ہر ماہ اپنی پنشن وصول کرنے کیلئے گھنٹوں نیشنل بنک کے با ہر لمبی قطا روں میں کھڑا ہو نا پڑ تا تھا۔ وفاقی محتسب نے اس صو رتحال کا نو ٹس لیا ا ور یہ ہدا یت کی کہ پنشنروں کی پنشن ان کے اکاؤنٹ میں بھیجی جا ئے اور وہ جب چا ہیں، اے ٹی ایم کارڈ یاچیک کے ذریعے رقم نکلوا لیں۔ علا وہ ازیں وفا قی محتسب نے تمام سر کاری اداروں کو ہدا یت کی کہ وہ اپنے ہا ں کم از کم گر یڈ انیس کے افسر کی سر برا ہی میں ایک پنشن سیل قا ئم کر یں جو ریٹائر ہونے والے سر کاری ملا زم کی ریٹا ئر منٹ سے ایک سال قبل اس کی پنشن کے کا غذات مکمل کر نا شروع کر دے تا کہ اس کی پنشن اور دیگر واجبات کی ادائیگی میں تا خیر نہ ہو۔
وفاقی محتسب نے 85 لا کھ کے قر یب بیرون ملک مقیم پاکستا نیوں کے مسا ئل کے حل کے لئے الگ سے ایک”سہو لیا تی کمشنر سیل“ قا ئم کر رکھا ہے اور پاکستان کے تمام بین الا قوا می ہوا ئی اڈوں پر”یکجاسہو لیا تی مرا کز“ قا ئم کئے گئے ہیں جہاں بیرون ملک پاکستانیوں سے متعلق با رہ سر کا ری اداروں کے ذمہ داران چوبیس گھنٹے مو جود رہتے ہیں اور مو قع پر ہی ان کی شکا یات کا ازالہ کرتے ہیں۔وفاقی محتسب نے پا کستان کے تمام سفا رتخا نوں کو ہد ایت کر رکھی ہے کہ پا کستان کے سفیر ہفتے میں ایک دن بیرون ملک پاکستانیوں کیلئے مختص کر یں اور ان کی شکا یا ت سن کر ان کا فوراً ازالہ کریں۔بیرون ملک پا کستا نیوں کے لئے سہو لیا تی کمشنر کے تو سط سے سال2021 ء کے دوران54,352 سے زائد بیرو ن ملک پا کستا نیوں کی شکا یات کا ازالہ ہوا۔