17

واٹس ایپ فیس بک کے ساتھ صارفین کا ڈیٹا شیئر کر رہا ہے؟ کیا یہ نئی پالیسی یورپی صارفین پر اثر انداز ہوگی ؟

واٹس ایپ کی نئی پالیسی نے صارفین کو مشکل میں ڈال دیا ہےاور واٹس ایپ کے استعمال کو لے کر بہت سے سوالات عام صارف کے ذہن میں آرہے ہیں جن کا تفصیلی جواب میں آپ کو دینے کی کوشش کروں گا۔
انٹر نیٹ کے ذرائع پیغام رسانی کی ایپ، واٹس ایپ نے اپنی پالیسی تبدیل کر دی ہے اور صارفین کو 8 فروری تک کا وقت دیا ہے کہ وہ اسے قبول کریں ورنہ اکاؤنٹ ڈیلیٹ کردیا جائے گا۔ تمام صارفین کو آٹھ فروری 2021 تک نئی شرائط سے اتفاق کرنا ہو گا ورنہ وہ اپنی واٹس ایپ بات چیت اور رابطوں تک رسائی سے محروم ہوجائیں گے۔

کیا یہ نئی پالیسی یورپی صارفین پر اثر انداز ہوگی؟
نہیں! پالیسی کا ادراک غیر یورپی صارفین پر ہوگا۔ واٹس ایپ کا کہنا ہے کہ نئی ڈیٹا پالیسی یورپی صارفین پر اثر انداز نہیں ہوگی۔

کیا واٹس ایپ آپ کے پیغامات کو فیس بک کے ساتھ شیئر کرے گا؟
نہیں! رازداری کی پالیسی واٹس ایپ کے ذاتی چیٹ کرنے کے انداز کو تبدیل نہیں کرے گی۔ واٹس ایپ اینڈ ٹو اینڈ انکرپٹڈ ہی رہے گا- کوئی تیسرا فریق انہیں پڑھ نہیں سکتا۔ ایک بیان میں واٹس ایپ نے کہا: ” واٹس ایپ کے فیس بک کے ساتھ ڈیٹا شیئر کرنے کے اس اپ ڈیٹ سے صارفین کا اس ایپ کو استعمال کرنے کے طریق کار میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی ۔لوگ دوستوں یا کنبے کے ساتھ نجی طور پر بات چیت کیسے کرتے ہیں اس سے اس پالیسی کا کوئی تعلق نہیں ہے۔ واٹس ایپ لوگوں کی رازداری کے تحفظ کے لئے پرعزم ہے”۔

کیا واٹس ایپ صارفین کے پیغامات کو محفوظ کر رہا ہے؟
نہیں! واٹس ایپ کی رازداری کی پالیسی کے مطابق ، ایک بار پیغام پہنچنے کے بعد اسے کمپنی کے سرورز سے “ڈیلیٹ” کردیا جاتا ہے۔ واٹس ایپ کسی پیغام کو صرف اس وقت اسٹور کرتا ہے جب اسے “فوری طور پر نہیں پہنچایا جاسکتاہو “۔ – اس کے بعد یہ میسج انکرپٹ فارم میں “30 دن تک” اپنے سرورز پر رہ سکتا ہے کیونکہ واٹس ایپ اس کو پہنچانے کی کوشش کرتا رہتا ہے۔ اگر 30 دن بعد کسی بھی وجہ سے پیغام نہ پہنچ سکے تو ، پیغام حذف ہوجاتا ہے۔

واٹس ایپ فیس بک کے ساتھ کون سا ڈیٹا شیئر کرے گا؟
فیس بک کے ساتھ ڈیٹا کا تبادلہ درحقیقت پہلے ہی ہوچکا ہے۔ یوروپی یونین کے صارفین فیس بک کے ساتھ ڈیٹا شیئر نا کرنے کا اختیار رکھتے ہیں جبکہ باقی دنیا کے پاس یکساں انتخاب کا حق نہیں ہے۔
واٹس ایپ کی جانب سے دی گئی نئی پالیسی کے حساب سے یہ ایپ بیٹری لیول، سگنل کی مضبوطی، ایپ ورژن، براؤزر انفارمیشن، موبائل نیٹ ورک، کنکشن انفارمیشن (بشمول فون نمبر، موبائل آپریٹر یا آئی ایس پی)، لینگوئج اینڈ ٹائم زون، آئی پی ایڈریس، ڈیوائس آپریشنز انفارمیشن وغیرہ اکٹھا کرتی ہے اور یہ معلومات فیس بک کے ساتھ شیئر کیا جائےگا۔

کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ واٹس ایپ آپ کے ڈیٹا کو اشتہاروں کے لئے استعمال کرے گا؟
واٹس ایپ ذرائع کا کہنا ہے کہ ابھی ایپ میں بینر ایڈز کا اضافہ نہیں کیا جارہا . تاہم کمپنی نے یہ بھی بتایا کہ اگر اشتہارات کو متعارف کرایا جائے گا تو پرائیویسی پالیسی کو اپ ڈیٹ کیا جائے گا، یعنی ایسا چند ہفتوں یا مہینوں کے بعد ممکن ہوسکتا ہے۔واٹس ایپ کی جانب سے صارفین کا ڈیٹا فیس بک کے گلوبل ڈیٹا سینٹرز میں محفوظ کیا جائے گا۔

اب سوال یہ ہے کہ کیا آپ کو رازداری کی پالیسی کو قبول کرنا چاہیئے؟
ہاں! یہ زیادہ تر سافٹ ویئر کے لئے معیاری پریکٹس ہے۔ اگر آپ نہیں چاہتے ہیں تو آپ اپنا اکاؤنٹ حذف کرسکتے ہیں اور کسی اور میسیجنگ ایپ کا استعمال کرسکتے ہیں۔
اگر آپ اپنا واٹس ایپ اکاؤنٹ حذف کردیتے ہیں تو بھی آپ کا ڈیٹا ڈیلیٹ نہیں ہوگا۔جب آپ اپنا اکاؤنٹ ڈیلیٹ کریں گے تو ایسا کرنے سے گروپس سے متعلق تفصیلات، جن کو آپ نے بنایا ہو یا دیگر صارفین کی تفصیلات،جن سے آپ کا بھی تعلق ہو، جیسے آپ کی جانب سے بھیجے جانے والے میسجز ،متاثر نہیں ہوں گے۔
کچھ وٹس ایپ صارفین نے سوشل میڈیا پر نئی پالیسی کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ بہت سے لوگوں کا کہنا ہے کہ وہ سگنل جیسی حریف میسجنگ ایپ کو استعمال کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔
سگنل ایک اور میسجنگ ایپ ہے جو مفت اور اینڈ ٹو اینڈ انکرپٹڈ ہے اور جس نے نئی واٹس ایپ پالیسی کی روشنی میں مقبولیت حاصل کی ہے۔ واٹس ایپ اپنے خفیہ کاری کیلئے سگنل کا پروٹوکول استعمال کرتا ہے۔ لیکن سگنل کسی بھی کارپوریشن کی ملکیت نہیں ہے اور اسے غیر منافع بخش تنظیم کے ذریعے چلایا جاتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں