Notice: Undefined index: geoplugin_countryName in /customers/5/8/f/urduqasid.se/httpd.www/wp-content/plugins/stylo-core/stylo-core.php on line 96
188

سب ہی مصروف تھے خود کو بنانے میں…

سب ہی مصروف تھے خود کو بنانے میں
اور میں ہوں، کہ خود کو توڑتا ہی رہا

❉❉❉❉❉

بلندیوں کو پالینے کہ لیے سب بھاگتے رہے
اور میں کہ پستیوں میں شمع روشن کرتا رہا

❉❉❉❉❉

زنبیلیں لٹا دی اپنی خوشیاں جینے میں دنیا نے
اور میں، کہ اپنی جذبوں کی خستہ گٹریاں سنبھالتا رہا

❉❉❉❉❉

منافقوں کی بھیڑ میں پڑی ایسی وہ ضربِ کار
سنبھلا میں ایسا، کہ گرنے کا خوف جاتا رہا

❉❉❉❉❉

لوگ ذوقِ سفر میں زاد راہ جمع کرتے رہے
اور میں، ڈوبنے کہ خوف میں اپنی کشتی سے ساماں گراتا رہا

❉❉❉❉❉

روشنیوں میں رہنے والے تاریکیوں کو کوستے رہے
اور میں، تاریکی میں سفرِ جستجو کے حصول میں کوشاں رہا

❉❉❉❉❉

زمانہ کبھی نا تھکا اپنی کم ضرفیوں سے
اک میں ہی بے عقل تھا، کہ اپنا خلوص لٹاتا رہا

❉❉❉❉❉

تہنائی کے خوف سے لوگ محفل سجاتے رہے
اورمیں، کہ تنہا خود شناسی میں مبتلا رہا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں